دل تجھ پہ لٹایا ہے جان تجھ پہ لٹائیں گے

 دل تجھ پہ لٹایا ہے جان تجھ پہ لٹائیں گے 


دل تجھ پہ لٹایا ہے جان تجھ پہ لٹائیں گے

تیرے نام پہ اے آقا ہم سر کو کٹائینگے۔

        …………………………

رومی نے جو مئے پیئی تھی جامی نے جو مئے پیئی تھی

 کیا آپ میرے آقا وہ ہم کو پلائینگے؟

       …………………………

دل تیری زیارت کو بیتاب سا رہتا ہے

کب عید میری ہوگی کب دید کرائیں گے؟

        …………………………

جو تجھ سے ملے ہونگے وہ تکتے رہے ہونگے

وہ چہرہ میرے آقا کب ہم کو دکھائیں گے؟   

         …………………………

قدموں میں  تیرے آقا مانگیں گے یہ رو رو کر

 اب جان نکل جاۓ یا پھر پھر آئیں گے؟

           …………………………

اتنا تو قریب آئیئے اس دل میں سما جائیئے 

یا اتنا بتا جائیئے کہ قبر میں آئیں گے؟  

             …………………………

بیکار سا بندہ ہوں میرے آقا میں گندا ہوں

اب آپ بتادیجئے کیا مجھ کو نبھائیں گے؟

ایک تبصرہ شائع کریں

جدید تر اس سے پرانی