رات دن اُنﷺ کے کرم کے گیت ہم گاتے رہے

 رات  دن  اُنﷺ  کے  کرم  کے  گیت  ہم  گاتے  رہے

بے طلب   بخشش   ہوئی،   ہم   بےسبب  پاتے رہے

********

اپنی    بداعمالیوں    پر،    ہم    تو   شرماتے   رہے

اور   کرم   پر   ہی   کرم   سرکارﷺ   فرماتے  رہے

********

یہ    کرم    بھی   بارہا،   سرکارﷺ   فرماتے   رہے

نعت   میں   لکھتا   رہا،   سرکارﷺ  لکھواتے  رہے

********

صاحبِ   معراجﷺ   کی   نسبت  مدینہ  بن  گئی

ہم    تصور    میں   وہاں   آتے   رہے   جاتے    رہے

********

جب  سے  آغوشِ  کرم  میں،  لے  لیا سرکارﷺ نے

جس   قدر  طوفان  اُٹھے،  مجھکو  راس  آتے رہے

********

رات  بھر  جشنِ  چراغاں  ہی رہا، اشکوں کی خیر

آپﷺ  کی  یادوں  میں  ڈھل  کر نور برساتے رہے

********

وہﷺ   مِری  فریاد   سے   پہلے،   مدد   کو  آ  گئے

اور   ہوں   گے   وہ،   جنہیں   حالات   تڑپاتے  رہے

********

اُنﷺ  پہ  اِتراؤ،  کنارے  سے  لگائیں  گے  وہیں

ڈوب    جاؤ    گے،   اگر   غیروں   پہ   اِتراتے   رہے

********

کچھ  نہ  تھا  مقصود،  دیدارِ  محمدﷺ  کے  سوا

اُنﷺ  کے  دیوانے  ہر  اک منصب کو ٹھکراتے رہے

********

اُنﷺ  کی  نسبت  نے سرِ ساحل مجھے پہنچا دیا

گو   کئی   طوفان  مِری  کشتی  سے  ٹکراتے  ریے

********

رَحمَتہً الِلْعَالَمِیںﷺ کی   شانِ   رحمت  کے  نثار

دشمنوں   پر   بھی  کرم  سرکارﷺ   فرماتے   رہے

********

ذکرِ  محبوبِ  خداﷺ  کا  فیض  ہے  اقبال کہ  ہم

نعت   سے   عُشَّاق   کی   محفل  کو  مہکاتے  رہے

********

 صلی اللّٰہ علیہ وآلہ وسلّم

ایک تبصرہ شائع کریں

جدید تر اس سے پرانی