مصطفی جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام





 مصطفی جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام


مصطفی جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام

شمعِ بزمِ ہدایت پہ لاکھوں سلام

..........

مِہرِ چرخِ نبوت پہ روشن دُرود

گلِ باغِ رسالت پہ لاکھوں سلام

..........

شہرِ یارِ ارم تاج دارِ حرم

نوبہارِ شفاعت پہ لاکھوں سلام

..........

شبِ اسرا کے دولہا پہ دائم دُرود

نوشۂ بزمِ جنّت پہ لاکھوں سلام

..........

صاحبِ رَجعتِ شمس و شقُ القمر

نائبِ دستِ قدرت پہ لاکھوں سلام

..........

جس کے زیرِ لِوا آدم و من سِوا

اس سزائے سیادت پہ لاکھوں سلام

..........

عرش تا فرش ہے جس کے زیرِ نگیں

اُس کی قاہر ریاست پہ لاکھوں سلام

..........

مجھ سے بے کس کی دولت پہ لاکھوں دُرود

مجھ سے بے بس کی قوت پہ لاکھوں سلام

..........

ہم غریبوں کے آقا پہ بے حد دُرود

ہم فقیروں کی ثروت پہ لاکھوں سلام

..........

دُور و نزدیک کے سُننے والے وہ کان

کانِ لعلِ کرامت پہ لاکھوں سلام

..........

جس کے ماتھے شفاعت کا سہرا رہا

اُس جبینِ سعادت پہ لاکھوں سلام

..........

جن کے سجدے کو محرابِ کعبہ جھکی

اُن بھووں کی لطافت پہ لاکھوں سلام

..........

جس طرف اٹھ گئی دم میں دم آ گیا

اُس نگاہِ عنایت پہ لاکھوں سلام

..........

نیچی آنکھوں کی شرم و حیا پر دُرود

اونچی بینی کی رفعت پہ لاکھوں سلام

..........

جس سے تاریک دل جگمگانے لگے

اُس چمک والی رنگت پہ لاکھوں سلام

..........

پتلی پتلی گلِ قُدس کی پتّیاں

اُن لبوں کی نزاکت پہ لاکھوں سلام

..........

وہ دہن جس کی ہر بات وحیِ خدا

چشمۂ علم و حکمت پہ لاکھوں سلام

..........

وہ زباں جس کو سب کُن کی کنجی کہیں

اُس کی نافذ حکومت پہ لاکھوں سلام

..........

جس کی تسکیں سے روتے ہوئے ہنس پڑیں

اُس تبسم کی عادت پہ لاکھوں سلام

..........

ہاتھ جس سمت اُٹھّا غنی کر دیا

موجِ بحرِ سماحت پہ لاکھوں سلام

..........

نُور کے چشمے لہرائیں دریا بہیں

انگلیوں کی کرامت پہ لاکھوں سلام

..........

کُل جہاں مِلک اور جَو کی روٹی غذا

اُس شکم کی قناعت پہ لاکھوں سلام

..........

جس سہانی گھڑی چمکا طیبہ کا چاند

اُس دل افروز ساعت پہ لاکھوں سلام

..........

پہلے سجدے پہ روزِ ازل سے دُرود

یادگاریِ اُمّت پہ لاکھوں سلام

..........

اللہ اللہ وہ بچپنے کی پھبَن!

اُس خدا بھاتی صورت پہ لاکھوں سلام

..........

پارہائے صُحف غنچہ ہائے قُدُس

اہلِ بیتِ نبوت پہ لاکھوں سلام

..........

آبِ تطہیر سے جس میں پودے جمے

اُس ریاضِ نجابت پہ لاکھوں سلام

..........

اُس بتولِ جگر پارۂ مصطفی

حجلہ آرائے عِفّت پہ لاکھوں سلام

..........

جس کا آنچل نہ دیکھا مہ و مِہر نے

اُس رِدائے نَزاہت پہ لاکھوں سلام

..........

سیّدہ زاہرہ طیّبہ طاہرہ

جانِ احمد کی راحت پہ لاکھوں سلام

..........

جس مسلماں نے دیکھا اُنھیں اک نظر

اُس نظر کی بصارت پہ لاکھوں سلام

..........

جن کے دشمن پہ لعنت ہے اللہ کی

اُن سب اہلِ محبت پہ لاکھوں سلام

..........

باقیِ ساقیانِ شرابِ طہور

زینِ اہلِ عبادت پہ لاکھوں سلام

..........

اور جتنے ہیں شہزادے اُس شاہ کے

اُن سب اہلِ مکانت پہ لاکھوں سلام

..........

اُن کی بالا شرافت پہ اعلا دُردو

اُن کی والا سیادت پہ لاکھوں سلام

..........

شافعی مالک احمد امامِ حنیف

چار باغِ امامت پہ لاکھوں سلام

..........

کاملانِ طریقت پہ کامل دُرود

حاملانِ شریعت پہ لاکھوں سلام

..........

غوثِ اعظم امامُ التقیٰ والنقیٰ

جلوۂ شانِ قدرت پہ لاکھوں سلام

..........

قطبِ ابدال و ارشاد و رُشدالرشاد

مُحییِ دین و ملّت پہ لاکھوں سلام

..........

مردِ خیلِ طریقت پہ بے حد دُرود

فردِ اہلِ حقیقت پہ لاکھوں سلام

..........

جس کی منبر ہوئی گردنِ اولیا

اُس قدم کی کرامت پہ لاکھوں سلام

..........

ایک میرا ہی رحمت میں دعویٰ نہیں

شاہ کی ساری اُمّت پہ لاکھوں سلام

..........

کاش محشر میں جب اُن کی آمد ہو اور

بھیجیں سب اُن کی شوکت پہ لاکھوں سلام

..........

مجھ سے خدمت کے قُدسی کہیں ہاں ! رضاؔ

مصطفی جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام

..........





ایک تبصرہ شائع کریں

جدید تر اس سے پرانی